Lambi Ha Gham Ki Shaam Magar Shaam He To Ha - Faiz Ahmed Faiz

ہم پر تمہاری چاہ کا الزام ہی تو ہے

دشنام تو نہیں ہے یہ اکرام ہی تو ہے

کرتے ہیں جس پہ طعن کوئی جرم تو نہیں

شوق فضول و الفت ناکام ہی تو ہے

دل مدعی کے حرف ملامت سے شاد ہے

اے جان جاں یہ حرف ترا نام ہی تو ہے

دل ناامید تو نہیں ناکام ہی تو ہے

لمبی ہے غم کی شام مگر شام ہی تو ہے

دست فلک میں گردش تقدیر تو نہیں

دست فلک میں گردش ایام ہی تو ہے

آخر تو ایک روز کرے گی نظر وفا

وہ یار خوش خصال سر بام ہی تو ہے

بھیگی ہے رات فیضؔ غزل ابتدا کرو

وقت سرود درد کا ہنگام ہی تو ہے

فیض احمد فیض –

hum par tumhārī chaah ilzām to hai

dushnām to nahīñ hai ye ikrām to hai

karte haiñ jis pe ta’an koī jurm to nahīñ

shauq-e-fuzūl o ulfat-e-nākām to hai

dil mudda.ī ke harf-e-malāmat se shaad hai

ay jān-e-jāñ ye harf tirā naam to hai

dil nā-umīd to nahīñ nākām to hai

lambī hai ġham sham magar sham to hai

dast-e-falak meñ gardish-e-taqdīr to nahīñ

dast-e-falak meñ gardish-e-ayyām to hai

āḳhir to ek roz karegī nazar vafā

wo yār-e-ḳhush-ḳhisāl sar-e-bām to hai

bhīgī hai raat ‘faiz’ ġhazal ibtidā karo

waqt-e-sarod dard hañgām to hai

-Faiz Ahmed Faiz

Follow The Zaal