Dastoor by Habib Jalib

دیپ جس کا محلات ہی میں جلے

چند لوگوں کی خوشیوں کو لے کر چلے

وہ جو سائے میں ہر مصلحت کے پلے

ایسے دستور کو صبح بے نور کو

میں نہیں مانتا میں نہیں جانتا

میں بھی خائف نہیں تختۂ دار سے

میں بھی منصور ہوں کہہ دو اغیار سے

کیوں ڈراتے ہو زنداں کی دیوار سے

ظلم کی بات کو جہل کی رات کو

میں نہیں مانتا میں نہیں جانتا

پھول شاخوں پہ کھلنے لگے تم کہو

جام رندوں کو ملنے لگے تم کہو

چاک سینوں کے سلنے لگے تم کہو

اس کھلے جھوٹ کو ذہن کی لوٹ کو

میں نہیں مانتا میں نہیں جانتا

تم نے لوٹا ہے صدیوں ہمارا سکوں

اب نہ ہم پر چلے گا تمہارا فسوں

چارہ گر دردمندوں کے بنتے ہو کیوں

تم نہیں چارہ گر کوئی مانے مگر

میں نہیں مانتا میں نہیں جانتا

حبیب جالب –

diip jis ka mahallāt hi meñ jale

chand logoñ ḳhushiyoñ ko le kar chale

vo jo saa.e meñ har maslahat ke pale

aise dastūr ko sub.h-e-be-nūr ko

maiñ nahīñ māntā maiñ nahīñ jāntā

maiñ bhī ḳhā.if nahīñ taḳhta-e-dār se

maiñ bhī mansūr huuñ kah do aġhyār se

kyuuñ Darāte ho zindāñ dīvār se

zulm baat ko jahl raat ko

maiñ nahīñ māntā maiñ nahīñ jāntā

phuul shāḳhoñ pe khilne lage tum kaho

jaam rindoñ ko milne lage tum kaho

chaak sīnoñ ke silne lage tum kaho

is khule jhuuT ko zehn luuT ko

maiñ nahīñ māntā maiñ nahīñ jāntā

tum ne luuTā hai sadiyoñ hamārā sukūñ

ab na ham par chalegā tumhārā fusūñ

chārāgar dardmandoñ ke bante ho kyuuñ

tum nahīñ chārāgar koī maane magar

maiñ nahīñ māntā maiñ nahīñ jāntā